Pakistan's Urdu Forum (IT Knowledge)

For IT education (education for all)


    اجبنی شہر کے اجنبی راستے میرے تنہائی پر مسکراتے رہے

    Share
    avatar
    kamrankhan143
    Super Moderator

    Posts : 271
    Join date : 2010-03-17
    Age : 32
    Location : Abu Dhabi

    اجبنی شہر کے اجنبی راستے میرے تنہائی پر مسکراتے رہے

    Post by kamrankhan143 on Thu Mar 18, 2010 7:45 am

    اجبنی شہر کے اجنبی راستے میرے تنہائی پر مسکراتے رہے
    میں بہت دیر تک یونہی چلتا رہا تم بہت دیر تک یاد آتے رہے

    زخم جب بھی کوئی ذہن و دل پر لگا زندگی کی طرف اک دریچہ کھلا
    ہم بھی گویا کسی ساز کے تار ہیں چوٹ کھاتے رہے گنگناتے رہے

    زہر ملتا رہا زہر پیتے رہے روز مرتے رہے روز جیتے رہے
    زندگی بھی ہمیں آزماتی رہی اور ہم بھی اسے آزماتے رہے

    سخت حالات کے تیز طوفان میں گھر گیا تھا ہمارا جنوں وفا
    ہم چراغ تمنا جلاتے رہے وہ چراغ تمنا بجھاتے رہے

    کل کچھ ایسا ہوا میں بہت تھک گیا اس لیے سن کے بھی ان سنی کر گیا
    کتنی یادوں کے بھٹکے ہوئے کارواں دل کے زخموں کے در کھٹکھاتے رہے




      Current date/time is Sat Nov 18, 2017 1:02 am